دینِ الہی میں موجود سیدنا گوھر شاہی کا علمِ لدنی-سلسلہ 1

کتابِ مقدس دینِ الہی وہ معرکتہ آراء کتاب ہےکہ اگر سالک اس کو یقین کے ساتھ پڑھے تو مصنف کی رہبری میسرآجائے۔ اس کتاب کی موجودگی میں آپ کو مرشد کی ضرورت نہیں ہے بلکہ یہ کتاب مرشد بن جائے گی کیونکہ یہ زندہ کلام ہے۔

قرآنِ مکنون سلسلہ اوّل:سورة الفاتحہ کی باطنی تشریح

قرآن مجید کی تفہیم وادراک کیلئے یہ ضروری ہےکہ آپ فاسق تونہیں ہیں کیونکہ اللہ فاسقوں کوہدایت نہیں دیتا۔ اللہ اُن کوہدایت دیتا ہےجن کا قلب دائمی ذکرِالہی سےمنورہواورجن کاقلب ذکراللہ سے غافل ہے وہ اللہ کےغضب کا شکار ہیں۔

لیلتہ المعراج: وحی جلی اور وحی خفی

واقعہ معراج ہمیں یہ سبق دیتا ہےکہ جس طرح نبی کریمؐ نےعالم ناسوت سےعالم بالا کا سفر کیااوراللہ کےروبروہوگئےاسی طرح ہم بھی اپنےاندرموجود روحوں کومنورکر کےرب کےدیدارتک جا سکتے ہیں اوریہ تعلیم سیدنا گوھر شاہی عطا فرما رہے ہیں۔

حضور پاکؐ کا غارِ حرا میں سفر

حضورؐ کے قلبِ مبارک میں جبرائیل نے نطفہٴِ نور ڈالا اور حضورؐ کا روحانی سفر پچیس سال کی عمر میں شروع ہوا۔ غارِ حرا میں حضورؐ کو جبرائیل نے لطیفہ انا کی تعلیم دی اور حضورؐ کو اللہ کا دیدار اور اللہ سے ہمکلام غارِ حرا میں ہی ہوئے۔

سیدنا گوھرشاہی دینِ الہی کیوں لائے ہیں؟

جب اللہ نے اپنے حسن کا اظہار کیا تو وہ مجسم صورت اختیار کر گیا جس کو حسن الہی کہتے ہیں۔ اللہ اپنے حسن کو دیکھ کر مستی میں جھوما جس سےجثہ طفل نوری اور جثہ توفیق الہی بن گئے۔ وہ حسن الہی کا وجود سیدنا گوھر شاہی میں موجود ہے۔

یومِ محشر میں اللہ کی ساق کا عریاں ہونا

یومِ محشرعام لوگوں کیلئے ہے۔ اللہ تعالی یومِ محشر میں ساق کا ظہور نہیں فرمائے گا کیونکہ وہ یومِ محشر کے بعد ایک خاص دن ہوگا جس میں انبیاء اور اولیاء ہونگے۔ جب پردہ اُٹھایا جائے گا تو وہ قدمین شریفین سیدنا امام مہدی سرکار گوھر شاہی کے ہونگے۔