یزیدیت کی کاٹ علم تصوف میں مُضمَر

جس کے سینے میں نور ہو گا وہ اُمتی ہو گااور جس کے سینے میں نور نہیں ہےوہ حضوؐرکے دور میں ہو یا آج کے دور میں وہ امیر معاویہ ہی ہے ۔خون بہا کر کے یو م حسین منایا تو یہ اعمال یزیدیت کا فروغ ہیں ۔ حسینیت کا فروغ دلوں کو صاف کرنے میں ہے۔

عظمت ِمصطفیٰﷺ کا راز

سورة الشوری کی یہ آیت اللہ تعالی کے فضل سے تعبیر ہے جس میں محمد الرسول اللہ کی عظمت کا راز بند ہے۔سیدی یونس الگوھر کی بے پناہ کرم نوازی ہے کہ وہ راز اب عریاں کئے جا رہے ہیں تاکہ غیب کا دروازہ کھل سکے۔ مزید تفصیل کیلئے پڑھیں۔

واقعہ کربلا کا حقیقی پس منظر اور امیر معاویہ کی سازش(حصہ دوئم)

واقعہ کربلا میں جن لوگوں نے امام حسین کو شہید کیا وہ بھی مسلمان تھے لیکن وہ کیا چیز تھی کہ نواسہ رسول پر ظلم اور استبداد سے باز نہ رہ رسکے۔ ان کے سینے نور الہی سے خالی تھی اور باطنی علم نہ ہونے کی وجہ سے انہوں نے ایسا کیا۔

واقعہ کربلا کا حقیقی پس منظر اور امیر معاویہ کی سازش(حصّہ اول)

واقعہ کربلا دین اسلام کا سیاہ باب ہے جس کا سبب امیر معاویہ ہے لیکن میدان کربلا میں جو امام حسین کے مقابل گروہ کھڑا تھا وہ بھی مسلمان تھا۔ یہ وہ گروہ تھا جو باطنی علم سے محروم تھاتبھی اہل بیت پر سفاکانہ مظالم ڈھائےاور خلافت کا اختتام ہوا ۔

کالے جادو کی حقیقت

خیر اور شر دونوں اللہ کی طرف سے ہے ۔ اللہ کی رحمت اور عذاب دونوں اس دنیا میں گھومتی رہتی ہے ، اللہ کی رحمت سے وہی مستفیض ہوتے ہیں جن کے سینوں میں نور ہوتا ہے اور اللہ کے عذاب سے وہ دل اور گھر محفوظ ہو گا جس میں اللہ کا ذکر ہو گا۔

ذکرِ قلب کے بعد روحانی بالیدگی کیسے ہو گی؟

راہِ سلوک میں چلنے والوں کی تین اقسام ہیں جن میں منفرد، مفید اور مستفیض ہوتے ہیں۔ منفرد کی پیروی نہیں کی جاسکتی اور مفید کی پیروی کی جا سکتی ہےجبکہ جو مستفیض ہیں وہ فیض لے بھی رہے ہیں اور پرچاری مہدی کے زریعے فیض آگے بڑھا بھی رہے ہیں۔

سیدنا امام مہدی گوھر شاہی کی تحریکِ باطن اور اُسکی مخالفت

امیر معاویہ نے خلافت کو وراثت بنا لیا اور یہی فتنہ آگے چل کر واقعہ کربلا کا باعث بنا۔ یہی کچھ سیدنا امام مہدی گوھر شاہی کے فرزندان ِناہنجار نے کیاغیبت کو انتقال قرار دیا اور پھر تعلیمات ِ گوھر شاہی اور مشن پر وارث بن گئے۔

اُمتِ محمدی میں ولایت کے مربوط نظام کی کیوں ضرورت تھی؟

جسطرح بنی اسرائیل میں کثرت سے انبیاء آئے ہیں اسی طرح اُمت محمدی میں اولیاء کثرت سے آئے ہیں جن میں اولیاءحق اور اولیاءخیرشامل ہیں تاکہ اہل کتاب اور غیر مذہب میں بھی اللہ کا نور آجائے اور شمع توحید روشن ہو جائے۔

کیا مزارات پر جانا اور اُن سے مانگنا شرک ہے ؟

مزاروں پر جانا اُن لوگوں کے لئے فائدہ مند ہے جو مومن ہیں کیونکہ اولیاء اللہ کے لطائف ان کی قبر میں ہوتے ہیں اور لوگوں کو فیض پہنچاتے ہیں اس لئے مزارات پر جانا باعث سعادت و باعث فیض ہےکیونکہ اللہ نے اُن کو اپنی نعمت سے نوازہ ہے۔