مہر نبوت اور مہر مہدیت کی باطنی حقیقت

امام مہدی ؑ کے پشت مبارک پر جو مہر ہو گی اس میں باطنی علم اور نورانیت کا عمل دخل ہے ، اُن کی نسوں میں اللہ کا نور دوڑ رہا ہو گاجب اللہ تعالی چاہے گا تو وہ نور نسوں کے اندر اُبھار پیدا کر کے اُن نسوں کے زریعے مہر مہدیت نمایاں کرے گااور اُس میں سے سات رنگ کی شعاعیں نکلیں گی ۔

تزکیۂ نفس کے مراحل اور درپیش مشکلات

تزکیہ نفس روحانیت کا سب سے اہم اور دشوار کام ہے ، ! اگر نفس پاک کرنے کی ہمت نہیں ہے تو پھر زبان سے لفظ محبت ادا کرنے کا بھی حق نہیں ہے ،جو اپنے آپ سے دشمنی نہیں کر سکتا وہ اپنے مرشد سے محبت نہیں کر سکتا ہے۔جن کو اپنی ذات سے پیار ہے وہ رب سے محبت نہیں کرسکتے۔

حج کی باطنی حقیقت کیا ہے؟

اصل خانہ کعبہ بیت المامور میں موجود ہے اور وہاں سے ایک نور کی تجلی نیچے خانہ کعبہ پر ایامِ معدود میں پڑتی ہے ۔ حج کی استطاعت یہ ہے کہ اگر آپ کے ایک یا دو لطائف جاری ہیں لیکن جو نور کی تجلی خانہ کعبہ پر پڑ رہی ہے اس سے ساتوں لطائف منور ہو جائیں اور انسانیت کی تکمیل ہو جائے۔

حبل اللہ اور عشق

اللہ تعالیٰ نے ابتداء سے لے کر انتہا تک دنیا میں تین دور رکھے ہیں ، پہلا دور دین کا ہے جس میں انبیاء و مرسلین جڑے ہیں، دوسرا دور رحمت کا ہے جس سے اولیاء، فقراء اور درویش جڑے ہیں ،تیسرا اور آخری دور امام مہدی کا دور ہے ، وہ دور عشق کا ہے۔

مرتبہ امام مہدی انبیاء سے کیسے افضل ہو گا؟

احادیث ِ نبوی اور مستند روایات میں لکھا ہے کہ امام مہدی کی ہستی انبیاء سے افضل ہو گی اورچار درجے کی نبوت والے مرسل عیسیٰؑ امام مہدی کے مرشد ہوں گے۔ امام مہدی کی ہستی معظم وہ ہے کہ جس کا اللہ خود بھی منتظر ہےاور یہ بات قرآن سے ثابت ہے، تفصیل جاننے کے لئے پڑھیں۔

عالم ِجبروت کیا ہے اور کس کی شفاعت ہو گی ؟

عالم جبروت میں دو مقامات ہیں جن کو عالم ارواح اور عالم برزخ کہا جاتا ہے ، عالم برزخ میں دو اور مقامات ہیں جنھیں علیین اور سجین کہا جاتا ہے ۔ علیین میں ذاکر قلبی کی ارواح اور سجین میں جو ذاکر نہ ہوں ان کو بھیجا جاتا ہے اور یہی لوگ شفاعت کے منتظر ہوں گے۔

کینیڈا میں الرٰ ٹی وی کی تشہیر

سیدنا امام مہدی گوھر شاہی نے جس تحریک اخلاص کا آغاز فرمایا ہے اسی تحریک اخلاص کو نمائندہ گوھر شاہی عزت مآب سیدی یونس الگوھر عوام الناس تک پہنچا رہے ہیں تاکہ لوگوں کے قلوب اور ارواح پاک ہو جائیں اور وہ خالص ہو جائیں۔

کچھ بدگمانیاں کفرکے نزدیک کیسے لے جاتی ہیں ؟

قرآن کے مطابق کچھ بدگمانیاں کفر کے نزدیک لے جاتی ہیں ۔گمان دو طرح کے ہیں اچھا گمان اور بُرا گمان ، دونوں گمان خطرناک ہیں ،کسی کے لیے اچھا گمان کر لیا تو اُس کی بُری بات بھی اچھی لگے گی اور اگر گمان بُرا قائم کر لیا تو پھر اُس کی اچھی بات بھی بُری لگے گی۔

حق کی تلاش اور درِ گوھر شاہی کا فیضان

تصوف کی ابتداء ذکر قلب کے جاری ہونے سے ہوتی ہے ، جب اللہ کا نور قلب میں داخل ہوتا ہے تو مومن کے درجے پر فائز ہوتے ہیں اورقرآن کے مطابق نماز بھی مومنین پر ہی فرض کی گئی ہیں ۔ مومن بننے کے لئے اللہ کے اسم کا دل میں داخل ہونا ضروری ہے ۔